مرکزی مینیو کھولیں

ویکی شیعہ β

حَسّان بن ثابِت
کوائف
مکمل نام حَسّان بن ثابِت
کنیت ابوالولید، ابوالحُسام، ابوعبدالرحمان اور ابوالمضرّب
مہاجر/انصار انصار
نسب قبیلہ خزرج اور بنی‌ نجار کے طائفہ سے
تاریخ وفات ۴۰ تا ۵۴ ق
دینی خدمات
اسلام لانا پیغمبر اکرم کی مدینہ ہجرت کے بعد اسلام لے آیا
دیگر کارنامے امیرالمؤمنین علی(ع) کی بیعت نہ کرنا
آثار دیوان شعر


حَسّان بن ثابِت ظہور اسلام سے پہلے اور صدر اسلام کے نامور شعراء میں سے تھا۔ انہیں صحابہ رسول خدا(ص) میں شمار کیا جاتا ہے۔ پیغمبر اکرم(ص) کی دفاع اور اسلام دشمنوں کے طعنوں کے جواب میں اشعار بھی کہے ہیں۔ البتہ انہوں نے صدر اسلام کے کسی بھی غزوات میں شرکت نہیں کی۔

تاریخی منابع کے مطابق حسان نے امام علی(ع) کی خلافت پر پہنچنے کے بعد آپ کی بیعت سے انکار کیا۔

تاریخی واقعات اور پیغمبر اکرم(ص) کی دفاع میں ان کے بے مثال اشعار موجود ہیں۔ تاریخی حوادث کی منظر کشی اور اشعار کی کثیر تعداد ان کے اشعار کی وجوہ امتیاز میں سے ہے۔

واقعہ غدیر کی توصیف میں حسان بن ثابت کے اشعار

ینادیهم یوم الغدیر نبیهم بخم و أسمع بالرسول منادیا
فقال فمن مولاکم و ولیکم فقالوا و لم یبدوا هناک التعادیا
إلهک مولانا و أنت ولینا و لم‌تر منا فی المقالة عاصیا
فقال له قم یا علی فإننی رضیتک من بعدی إماما و هادیا
فمن کنت مولاه فهذا ولیه فکونوا له أنصار صدق موالیا
هناک دعا اللهم وال ولیه و کن للذی عادی علیا معادیا

پیغمبر خدا(ص) نے غدیر کے دن اصحاب کو ندا دی، اور یہ کس قدر با اہمیت ندا تھی۔ آپ(ص) نے فرمایا: تمہارا مولا اور سرپرست کون ہے؟ اصحاب نے بے ساختہ کہا: آپ کا خدا ہمارا مولا اور آپ ہمارے سرپرست ہیں۔ ہم کبھی آپ کے حکم کی مخالفت نہیں کرینگے۔ اس وقت پیغمبر اکرم(ص) نے حضرت علی(ع) سے فرمایا: اٹھو میں نے تمہیں انتخاب کیا تاکہ تم میرے بعد ان کا امام اور رہبر ہو۔ اس کے بعد فرمایا جس جس کا میں مولا اور رہبر ہوں یہ علی اس کا مولا اور رہبر ہوگا، پس تم سب صدق دل سے ان کی پیروی کرو۔ بارالہا ان کو دوست رکھنے والوں کو دوست اور ان سے دشمنی رکھنے والوں کو دشمن قرار دیں۔

سید رضی، ص۴۳

فہرست

کنیت

ان کی کنیت‌ ابوالولید، ابوالحُسام، ابوعبدالرحمان اور ابوالمضرّب تھا[1] انہیں حُسام نیز کہا جاتا تھا[2]

ظہور اسلام سے پہلے

حسان یمنی‌الاصل تھا۔ وہ پیغمبر اکرم(ص) کی ولادت باسعادت سے چند سال پہلے (عام الفیل)[3] کو مدینہ میں پیدا ہوا اور وہیں پر نشو نما پائے۔[4] قبیلہ خزرج اور بنی‌ نجار کے طائفے سے ان کا تعلق اور پیغمبر اکرم(ص) کا رشتہ دار تھا۔[5] ان کے والد ثابت اور دادا مُنذِر بن حَرام، قم خزرج کے بزرگوں میں سے تھے۔[6] ان کی ماں فُرَیعۃ، نیز اسی قبیلہ سے تھی اور ہجرت کے بعد اسلام لے آیا۔[7] حسّان کو ابن‌ فُرَیعہ نیز کہا جاتا تھا۔[8]

ظہور اسلام سے پہلے حسّان غَسّانیان (منطقہ شام کے حکمران) اور پادشاہان حیرہ (عراق کا ایک منطقہ) کے دربار میں رفت و آمد رکھتا تھا اور ان کی مدح و سرائی کر کے ان سے تحائف لتا تھا اور یہ کام ان کی زندگی کی آخر تک جاری رہا۔[9] وہ عمر کے آخری سالوں میں نابینا ہوا۔[10]

پیغمبر اکرم(ص) کے دور میں

حسّان یہودی تھا لیکن پیغمبر اکرم(ص) کی مدینہ ہجرت کے بعد اسلام قبول کیا۔ اسلام لاتے وقت ان کی عمر 60 سال بتایا جاتا ہے۔[11] "بروکلمان"،[12] نے اس وقت ان کی عمر 60 سال سے کم قرار دیا ہے۔

غزوات میں غیر حاضری

حسّان جنگ و جدال کو پسند نہیں کرتا تھا کیونکہ اس پر ترس کا غلبہ تھا یوں انہوں نے کسی بھی غزوات میں شرکت نہیں کی۔ [13] لیکن اس کے باوجود انہوں نے اپنے آپ کو شیر کی طرح تصور کر رکھا تھا اور اپنی شجاعت کے جوہر ان کے اشعار میں نمایاں نظر آتا تھا جو پبغمبر اکرم(ص) کی تبسم کا باعث ہوا کرتا تھا۔ [14]

اسلام کی دفاع اور دشمنان اسلام کے طعنوں کے مقابلے میں اس کے اشعار

حسّان قوت بیان کا مالک تھا اور اشعار کے اسلام دشمنوں کے طعنوں کا جواب اور پیغمبر اکرم(ع) کے دفاع کرنے کی وجہ سے پیغمبر اکرم(ص) انہیں قدر کی نگاہ سے دیکھتے اور آپ کیلئے مایہ آرامش و سکون ہوا کرتا تھا۔[15] ان کے بارے میں لکھا گیا ہے کہ پیغمبراکرم(ص) ان کی تائید کیا کرتے تھے اور فرماتے تھے کہ حسان فرشتہ وحی کا مورد توجہ قرار پاتا ہے۔[16]

مشرکین قریش کے طعنوں کے سبب انہوں نے پیغمبر اکرم(ص) کے حکم سے قریش اور ان کی نسل سے متعلق معلومات ابوبکر سے سیکھا تھا اور بغیر اس کے کہ پیغمبر اکرم(ص) اور آپ کا خاندان پاک پر کوئی حرف آئے بغیر ایسے اشعار پڑھا کرتے تھے کہ مورد تحسین رسول خدا قرار پاتا تھا جو ہر سنے والا کو اپنی طرف جذب کرتا اور قریش کو مبہوت کر دیتا تھا۔[17]

جب بنی‌ تمیم نے پیغمبراسلام(ص) کی مخالفت کرنا شروع کیا اور اپنے آپ پر فخر و مباہات کرنے لگا تو اس وقت حسان نے رسول اکرم(ص) کا اس طرح دفاع کیا کہ وہ سب کے سب مسلمان ہوگئے۔[18]

داستان افک

واقعہ اِفْک میں حسّان بھی مورد مؤاخذہ قرار پایا لیکن انہوں نے عائشہ کی مدح و سرائی اور پیغمبر اکرم(ص) اور اسلام کے ساتھ اپنی وابستگی کو بیان کر کے پیغمبر اکرم(ص) اور عائشہ سے معزرت خواہی کی؛[19]

حسان کے حق میں پیغمبر اکرم(ص) کی دعا

رسول خدا(ص) نے حسان کے بارے میں فرمایا: "اللهم ایده بروح القدس""[20] خدایا انہیں روح القدس کا مورد تائید قرار دے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ پیغمبر اکرم(ص) نے مشروط طور پر ان کے حق میں دعا کیا تھا؛ کیونکہ اکثر دانشوروں کا خیال ہے کہ پیغمبر اکرم(ص) نے ان کے بارے میں فرمایا: "اے حسان جب تک تم ہمارا دفاع کرتے رہو گے روح القدس کا مورد تائید قرار پائے گا۔[21] البتہ یہ دعا مختلف صورتوں میں بیان ہوا ہے اور ایک جگہے پر پیغمبر اکرم(ص) نے حسان کے بارے میں فرمایا: "اللهم ایده بروح القدس لمناضلته عن المسلمین"،[22] خدایا مسلمانوں کا دفاع کرنے کے صلے میں روح القدس کے ذریعے حسان کی تائید فرما۔ ایک اور نقل میں آیا ہے: "إن اللّہ یؤید حسان بروح القدس ما نافح عن رسول اللّہ"[23] "خداوندعالم حسان کی حمایت کرے اور روح القدس کے ذریعے اس کی تائید کرے جب تک وہ رسول خدا کی مدد کرتا رہے۔"

حسان اور عثمان کے پیروکار

عثمان‌ بن عفان کے انتقام لینے کے واقعے میں حسّان عثمان کے پیروکاروں کے ساتھ شامل ہو گیا۔[24] اگرچہ عثمان کی حمایت اور ان کے قاتلوں کے خلاف کچھ اشعار کی نسبت حسان کی طرف دی گئی ہے لیکن یہ کوئی معتبر نہیں ہے۔[25] شوقی‌ ضیف[26] نے ان اشعار کو بنی امیہ کی من گھڑت حدیث قرار دیتے ہیں۔

امام علی(ع) کی بیعت نہ کرنا

امام علی(ع) کی خلافت پر پہنچنے کے بعد بعض افراد نے آپ کی بیعت سے انکار کیا، حسان بن ثابت منجملہ ان افراد میں سے تھا۔ [27] شیخ مفید لکھتے ہیں: "ایک گروہ نے امام علی(ع) کی بیعت کرنے سے انکا کیا مانند عبداللَّہ بن عمر بن خطاب، سعد وقاص، محمد بن مسلمۃ، حسان بن ثابت اور اسامۃ بن زید۔ حضرت علی(ع) نے ان کی بیعت کرنے سے انکار کرنے کے بعد ایک تقریر کیا آپ(ع) نے اس تقریر میں فرمایا: "...سعد، مسلمۃ، اسامۃ، عبداللَّہ اور حسان کی جانب سے ایسی خبر مجھ تک پہچی کہ جسے میں پسند نہیں کرتا ہوں میں اس معاملے میں خداوندعالم ہمارے درمیان حکم قرار دیتا ہوں۔"[28]

وفات

حسّان نے 100 سال سے بھی زیادہ زندگی گزاری یوں وہ سب سے معمّرینِ مُخَضرَم (وہ شخص جس نے اپنی زندگی کا کچھ حصہ دور جاہلیت اور کچھ حصہ اسلام میں گزارا ہو) شمار ہوتا ہے جس نے اپنی زندگی کا تقریبا نصف حصہ پیغمبراکرم(ص) کی مدینہ ہجرت کے بعد مدینے میں گزاری۔ [29] ان کی تاریخ وفات سنہ ۴۰ سے ۵۴ کے درمیان نقل ہوئی ہے۔ [30]

شعر و شاعری میں حسان بین ثابت کا مقام

حسّان کو عرب کے شہرنشین شعراء میں سب سے زیادہ معروف شعراء جانا جاتا ہے،[31] جنکی شاعری میں نشاط اور تازگی پائی جاتی تھی۔[32] انہوں نے اپنی پوری زندگی میں چاہے اسلام سے پہلے کی ہو یا اسلام لانے کے بعد کی، اس برتری کو محفوظ رکھا[33]لیکن اصمعی[34] کی نظر میں حسان کے اشعار اسلامی دور حکومت میں ترقی کی بجائے تنزلی کی طرف چلا گیا۔

حسّان کوئی ممتاز اشعار ہیں۔[35] دورہ جاہلیت میں ان کے سب سے ممتاز شعر "مدح ملوک غَسّان ہے۔ [36] ان کا شمار اصحاب مُذَہبات (ایسے شعراء جن کے اشعار سونے کے پانی سے لکھے جاتے تھے) میں ہوتا تھا[37] لیکن اس کے باوجود بازار عکاظ میں پیش کردہ ان کے اشعار "اعشی" اور "خَنساء" کے اشعار کے مقابلے میں خاص شہرت حاصل نہ کر سکا اور "حُطَیئہ" کی نظر میں بھی ان کی شاعری مطلوبہ مقام حاصل نہ کر سکی۔[38]

دیوان حسان ثابت

اکثر راویوں منجملہ ابن‌حبیب (متوفی ۲۳۸) نے حسان بن ثابت کے اشعار کو نقل کرتے ہوئے ان کے شعری مجموعے کو مرتب کرنے اور ان کی تشریح کی کوشش کی ہے۔[39]

جس مقدار میں اشعار کی نسبت حسان بن ثابت کی طرف دی گئی ہے اتنا کسی اور شاعر کی طرف نسبت نہیں دی گئی ہے اور احتمال دیا جاتا ہے کہ ان اشعار کی زیادہ تعداد کو قریش نے ان کی طرف نسبت دی ہے۔[40] یہ بھی احتمال دیا جاتا ہے کہ ان سے منسوب اکثر اشعار ان کے بیٹے "عبدالرحمان" اور بعض دیگر شعراء خاص کر کعب‌ بن مالک انصاری اور عبداللّہ‌ بن رواحہ کے اشعار سے مخلوط ہو گئی ہے۔[41]

حسان کے اشعار کی اہمیت کی وجوہات

تاریخی واقعات کی طرف اشارہ

حسّان کے اشعار میں تاریخی واقعات خصوصا پیغمبر(ص) کی سیرت اور آپ کے غزوات کی طرف اشارہ پائے جانے کی وجہ سے ان اشعار کی اہمیت میں دوچنداں اضافہ ہوتا ہے اور انہیں تاریخ صدر اسلام کے موثق مآخذ میں شمار کیا جاتا ہے۔[42]

غدیر خم کے بارے میں ان کے اشعار تاریخ اسلام میں پہلے غدیریہ کے نام سے پہچانی ہے۔[43]

پیغمبر اکرم(ص) کا دفاع

پیغمبر اکرم(ص) کا دفاع ان کی شاعری کی نمایاں خصوصیات میں سے ہے انہوں نے پیغمبر اکرم(ص) کی مدح و سرائی میں الفاظ اور تعبیرات کے استعمال میں ایک نئی روش اپنایا جس کی مثال دور جاہلیت میں کہیں نہیں ملتی ہے۔ اسی بنا پر مدح سرائی میں انہیں صاحب سبک و روش سمجھا جاتا تھا۔ [44]

منظر کشی

ان کے اشعار میں مدح، فخر اور طعنہ زنی کے علاوہ مرثیہ سرائی بھی موجود ہوتا تھا۔[45] فروخ کے مطابق [46] پیمغبر اکرم(ص) کی مدح سرائی میں علم صنائع و بدائع کے استعمال کرنے کی وجہ سے ممکن ہے انہیں سب سے پہلے اس علم کو استعمال کرنے والا شمار کیا جائے۔

متعلقہ صفحات

حوالہ جات

  1. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۲۰۳؛ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵؛ ابن‌عساکر، تاریخ مدینۃ دمشق، ج۱۲، ص۳۷۸؛ ابن‌حجر عسقلانی، الاصابۃ فی تمییز الصحابۃ، ج۲، ص۶۳.
  2. رجوع کنید بہ ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۸۹؛ آمدی، المؤتلف و المختلف، ص۸۹.
  3. ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۵ـ۱۳۶.
  4. بستانی، ادباءالعرب، ج۱، ص۲۷۲؛ بروکلمان، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، ص۱۵۲.
  5. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۷۹؛ شوقی‌ضیف، تاریخ الادب‌العربی، ج۲، ص۷۷.
  6. رجوع کنید بہ ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۰.
  7. ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵، ابن‌حجر عسقلانی، الاصابۃ فی تمییز الصحابۃ، ج۲، ص۶۳.
  8. رجوع کنید بہ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۴۴؛ آمدی، المؤتلف و المختلف، ص۱۶۵.
  9. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۱؛ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۱۵۹، ۱۶۴ـ۱۶۵، ۳۰۵ـ۳۰۶.
  10. ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵.
  11. ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۵ـ۱۳۶.
  12. بروکلمان، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، ص۱۵۲.
  13. ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵؛ ابن‌عساکر، تاریخ مدینۃ دمشق، ج۱۲، ص۴۳۳؛ نیز رجوع کنید بہ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۶۵ـ۱۶۶.
  14. رجوع کنید بہ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۶، ۱۶۶ـ۱۶۷.
  15. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۱؛ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵؛ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۴۳، ۱۶۰ـ۱۶۱.
  16. رجوع کنید بہ ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۱؛ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۸، ۱۴۲؛ مفید، الارشاد، ص۹۵.
  17. رجوع کنید بہ ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۰ـ۱۸۱؛ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۷ـ۱۴۰، حسّان‌بن ثابت، ج۱، ص۱۷ـ۱۸.
  18. رجوع کنید بہ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۴۶ـ۱۵۱.
  19. ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۵۶، ۱۶۱ـ۱۶۲؛ مفید، الجَمَل والنُصرۃ، ص۲۱۷ـ۲۱۹؛ قس: ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۵۷ـ۱۶۰ دوسروں سے نقل کرتے ہوئے جہاں پر لکھا گیا ہے کہ یہ مؤاخذہ حسان بن ثابت کی طرف سے تازہ مسلمان ہونے والے بعض مسلمانوں کے ذوپر حسان کے اعتراض کی وجہ سے تھا۔
  20. ابن حجر عسقلانی، الاصابۃ فی تمییز الصحابۃ، ج۲،ص.۵۵
  21. طبرسی، مجمع البیان،ج۲۰،ص۴۳۳.
  22. ابن عبدالبر، الاستیعاب، ج۱، ص۳۴۵.
  23. ابن اثیر، اسد الغابہ، ج۱، ص۴۸۲.
  24. طبری، سلسلہ۱، ص۳۲۴۵.
  25. بروکلمان، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، ص۱۵۳؛ مفید، الجمل و النصرۃ،ص ۲۱۷ـ۲۱۹.
  26. شوقی ضیف، تاریخ الادب‌العربی، ج۲، ص۸۱.
  27. ابن حجر عسقلانی، الاصابۃ فی تمییز الصحابۃ، ج۲، ص۵۵.
  28. شیخ مفید، الارشاد، ج۱، ص۲۳۷.
  29. ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۵.
  30. ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۵؛ ابن‌عساکر، تاریخ مدینۃ دمشق، ج۱۲، ص۳۸۰، ۴۳۴.
  31. اصمعی، کتاب فحولۃ الشعراء، ص۱۱، ۱۹؛ ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۷۹؛ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۶ـ۱۳۷.
  32. رجوع کنید بہ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ص۳۰۵.
  33. ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۳۶.
  34. بہ نقلِ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ص۳۰۵.
  35. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۷۹.
  36. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۸۱؛ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ص۳۰۵.
  37. بستانی، ادباءالعرب، ج۱، ص۲۷۵.
  38. رجوع کنید بہ ابوالفرج اصفہانی، ج۴، ص۱۶۷، ج۹، ص۳۴۰.
  39. بروکلمان، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، ص۱۵۳ـ۱۵۵؛ سزگین، تاریخ التراث‌العربی، ج۲، جزء۲، ص۳۱۴ـ۳۱۶.
  40. ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، ص۱۷۹، ۱۸۳.
  41. شوقی ضیف، تاریخ الادب‌العربی، ص۸۰؛ ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، ج۱، ص۳۰۷ـ۳۰۸؛ حسّان‌بن ثابت، دیوان، ج۱، ص۱۶۶، ۲۵۰، ۴۸۲، توضیح ولید عرفات.
  42. بستانی، ادباءالعرب، ج۱، ص۲۷۸؛ حسّان‌بن ثابت، دیوان، ج۱، ص۲۹ـ۳۰، ۶۷ـ۶۸، ۸۵ـ۸۶.
  43. امینی، الغدیر، ج۲، ص۶۵؛ سُلیم‌بن قیس ہلالی، کتاب سُلیم‌بن قیس الہلالی، ج۲، ص۸۲۸ـ۸۲۹؛ مفید، الجمل والنصرۃ، ص۲۲۰ـ۲۲۲.
  44. بستانی، ادباءالعرب، ج۱، ص۲۷۸، ۲۸۱.
  45. سزگین، تاریخ التراث‌العربی، ج۲، جزء۲، ص۳۱۲.
  46. فروخ، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، ص۳۲۶.


مآخذ

  • حسن‌بن بشر آمدی، المؤتلف و المختلف فی اسماءالشعراء و کناہم و القابہم و انسابہم و بعض شعرہم، در محمدبن عمران مرزبانی، معجم‌الشعراء، چاپ ف.کرنکو، بیروت، ۱۴۰۲/۱۹۸۲.
  • ابن اثیر، اسد الغابہ، بیروت، دارالفکر، ۱۴۰۹.
  • ابن‌حجر عسقلانی، الاصابۃ فی تمییز الصحابۃ، چاپ علی‌محمد بجاوی، بیروت، ۱۴۱۲/ ۱۹۹۲.
  • ابن‌سلام جمحی، طبقات فحول‌الشعراء، چاپ محمود محمد شاکر، (قاہرہ ۱۹۵۲).
  • ابن عبدالبر، الاستیعاب، بیروت،‌دار الجیل، اول، ۱۴۱۲.
  • ابن‌عساکر، تاریخ مدینۃ دمشق، چاپ علی شیری، بیروت، ۱۴۱۵ـ ۱۴۲۱/ ۱۹۹۵ ـ۲۰۰۱.
  • ابن‌قتیبہ، الشعر والشعراء، چاپ احمد محمد شاکر، (قاہرہ) ۱۳۸۶ـ۱۳۸۷/ ۱۹۶۶ ـ۱۹۶۷.
  • ابوالفرج اصفہانی.
  • عبدالملک‌بن قریب اصمعی، کتاب فحولۃ الشعراء، چاپ چارلز تورّی، بیروت، ۱۴۰۰/۱۹۸۰.
  • عبدالحسین امینی، الغدیر فی الکتاب والسنۃ و الادب، قم، ۱۴۱۶ـ۱۴۲۲/ ۱۹۹۵ـ۲۰۰۲.
  • کارل بروکلمان، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، نقلہ الی‌العربیۃ عبدالحلیم نجار، قاہرہ، ۱۹۷۴.
  • بطرس بستانی، ادباءالعرب، بیروت، ۱۹۸۸ـ۱۹۹۰.
  • حسّان‌بن ثابت، دیوان، چاپ ولید عرفات، لندن، ۱۹۷۱.
  • فؤاد سزگین، تاریخ التراث‌العربی، ج ۲، جزء۲، نقلہ الی‌العربیۃ محمود فہمی حجازی، (ریاض) ۱۴۰۳/۱۹۸۳، چاپ افست قم، ۱۴۱۲.
  • سُلیم‌بن قیس ہلالی، کتاب سُلیم‌بن قیس الہلالی، چاپ محمدباقر انصاری زنجانی، قم، ۱۳۸۴ش.
  • شوقی ضیف، تاریخ الادب‌العربی، ج ۲، قاہرہ، ۱۹۷۲.
  • طبری، تاریخ (لیدن).
  • طبرسی،فضل بن حسن، مجمع البیان، ترجمہ مترجمان، تہران، فراہانی، ۱۳۶۰.
  • عمر فروّخ، تاریخ الادب‌العربی، ج۱، بیروت، ۱۹۸۴.
  • محمدبن محمد مفید، الارشاد، ترجمہ رسولی محلاتی، تہران، اسلامیہ، دوم، بی‌تا.
  • ہمو، الجَمَل و النُصرۃ لسیدالعترۃ فی حرب البصرۃ، چاپ علی میرشریفی، قم، ۱۳۷۴ش.